نعت

نعت

مری شان کعبہ، مری جاں مدینہ
وہاں پر مرا دل، وہاں پر سفینہ

خدا کا کرم ہے یہ درسِ محمد
سکھا ہمیں زندگی کا قرینہ

مزہ پھر بھی آیا ہے جنت کا مجھکو
جُھلستی ہوئ دھوپ شہرِ مدینہ

کروڑوں دُرود و سلام اُن کے اوپر
جنہوں نے سکھایا مجھے مر کے جینا

گنہ گار تھا ، ہے یہ ظرفِ محمد
بلایا ظفر کو بھی شہرِ مدینہ

TOP 100 PERSONALITIES OF THE WORLD

TOP 100 PERSONALITIES OF THE WORLD

by Michael H. Hart

A Ranking of the Most Influential Persons in History

1. Muhammad (P.B.U.H)
2. Isaac Newton
3. Jesus Christ
4. Buddha
5. Confucius
6. St.Paul
7. Ts’ai Lun
8. Johann Gutenberg
9. Christoper Columbus
10. Albert Einetein
11. Louis Pasteur
12. Galileo Galilei
13. Aristotle
14. Euclid
15. Moses
16. Charles Darwin
17. Shih Huang Ti
18. Augustus Caesar
19. Nicolaus Copernicus
20. Antoine Laurent Lavoisier
21. Constantine the Great
22. James Watt
23. Michael Faraday
24. James Clerk Maxwell
25. Martin Luther
26. George Washington
27. Karl Marx
28. Orville and Wilbur Wright
29. Genghis Kahn
30. Adam Smith
31. Edward de Vere
32. John Dalton
33. Alexander the Great
34. Napoleon Bonaparte
35. Thomas Edison
36. Antony van Leeuwenhoek
37. William T.G. Morton
38. Guglielmo Marconi
39. Adolf Hitler
40. Plato
41. Oliver Cromwell
42. Alexander Graham Bell
43. Alexander Fleming
44. John Locke
45. Ludwig van Beethoven
46. Werner Heisenberg
47. Louis Daguerre
48. Simon Bolivar
49. Rene Descartes
50. Michelangelo
51. Pope Urban II
52. ‘Umar ibn al-Khattab’
53. Asoka
54. St. Augustine
55. William Harvey
56. Ernest Rutherford
57. John Calvin
58. Gregor Mendel
59. Max Planck
60. Joseph Lister
61. Nikolaus August Otto
62. Francisco Pizarro
63. Hernando Cortes
64. Thomas Jefferson
65. Queen Isabella I
66. Joseph Stalin
67. Julius Caesar
68. William the Conqueror
69. Sigmund Freud
70. Edward Jenner
71. Wilhelm Conrad Roentgen
72. Johann Sebastian Bach
73. Lao Tzu 74. Voltaire
75. Johannes Kepler
76. Enrico Fermi
77. Leonhard Euler
78. Jean-Jacques Rousseau
79. Nicoli Machiavelli
80. Thomas Malthus
81. John F. Kennedy
82. Gregory Pincus
83. Mani
84. Lenin
85. Sui Wen Ti
86. Vasco da Gama
87. Cyrus the Great
88. Peter the Great
89. Mao Zedong
90. Francis Bacon
91. Henry Ford
92. Mencius
93. Zoroaster
94. Queen Elizabeth I
95. Mikhail Gorbachev
96. Menes
97. Charlemagne
98. Homer
99. Justinian I
100. Mahavira

امید کی کرن

A lucky Pakistan

امید کی ایک کرن

مندرجہء ذیل مضمون میرے بھانجے نیاز مرتضٰی کا ہے جو ڈان میں چھپا ہے۔ یہ مضمون میرے لئے حوصلہ افزا ہے۔ نیاز نے برکلے سے پی ایچ ڈی کرنے کے بعد کئ سال اقوامِ متحدہ کے ساتھ تیسری دنیا میں کام کیا ہے۔ نیاز تیسری دنیا کی سیاست اور معاشیات کا ماہر ہے۔

Dr. Niaz Murtaza
Luck means that factors beyond one’s control supplement one’s efforts and merits to produce higher achievements. Highlighting heart-warming stories about sacrifices and perseverance, official narratives ignore luck’s role in national histories. However, academics must present complete truths. Though not necessarily the dominant factor, luck helped improve the Pakistan movement’s prospects and subsequent economic performance. We first consider the former.

The prospects of partition movements firstly depend on presenting strong claims about being a separate nation. The ideal nation is a large group of people having: i) a long common ethnic, racial or religious identity, ii) concentration and overwhelming majority in a large geographical area since long, iii) minimal internal racial, ethnic or religious differences and little such commonalities with neighbors. Japan scores highly on this definition. My Pakistani heart shouts that so did pre-1947 Indian Muslims. My academician’s head quietly assigns them low-to-moderate scores on criteria two and three. Ironically, even such scores still earn Pakistani nationhood reasonable ranking among third-world states since few of them house highly cohesive nations. Furthermore, national cohesion in present-day Pakistan has increased over 70 years, something Yugoslavia and USSR could not achieve in similar time.

Secondly, high nationhood scores are insufficient motivators or criteria for secession. Numerous nations with higher scores never pursue independence. Those that do so usually base it on unusually severe and prolonged mistreatment by dominant groups; most still fail. The Pakistan movement was an unusual pre-emptive one, based on fears of future domination rather than prolonged past mistreatment. It probably is the only preemptive separation movement to ever succeed. Thirdly, separation movements often succeed after many decades (Eritreans and South Sudanese); some remain unsuccessful even then (Kurds and Palestinians). Pakistan is among a few which got separation within years of demanding it. Ironically, Bangladesh did even better on this count.

Fourthly, separatists often suffer enormous one-sided brutalities, including heavy artillery and aerial attacks, in pursuing independence. Indian Muslims did not suffer one-sided casualties in asymmetrical war; rather casualties which were suffered by both sides in riots and which mostly occurred needlessly after independence’s approval. Given these four points, the Pakistan movement, despite incurring high losses in riots, seems highly lucky compared with the failure of many independence movements which possess higher nationhood scores and have suffered decades of one-sided brutalities. Conservatives may attribute this comparatively easier success to not luck but divine support for the Islamic fortress!

Present-day Pakistan was among pre-1947 India’s most backward regions. The British and Indians doubted its economic viability. Even Jinnah lamented his moth-eaten, truncated Pakistan. This truncation emerged from Muslim’s low score on the second nationhood criterion. However, luck blessed Pakistan even after independence economically. Pakistan surprisingly outperformed better-endowed India on poverty, overall growth rates and per capita income for nearly fifty years, partially due to favorable opportunities provided by the Korean, Cold and two Afghan wars and the ME bonanza.

Mohajirs benefited the most from this. Indian Muslims have the lowest average incomes among Indian religious groups. However, their migrated kin in Karachi have the highest average incomes among Pakistani ethnic groups despite their initial uprooting and subsequent reverse discrimination experiences. America is the land of immigrants. Not even there do post-WW2 immigrants enjoy such predominance. But natives have likely done better too. Present-day Pakistan is probably more industrialized than it would be within undivided India. Much of Indian industry is still south-based. Pakistani elites–industrialists, traders, bureaucrats, professionals, landlords, generals and mullahs—have certainly benefited highly from partition. Even the masses have probably done slightly better since absolute poverty is lower in Pakistan despite India’s comprehensive land reforms. Thus, partition has paid-off economically till now.

Two caveats apply to my “luck” thesis. First, luck helped Pakistan economically only, not politically. Its political performance was always poorer than India’s. Secondly, luck dividends ultimately subside and endowments primarily determine long-term performance. Thus, India now outperforms Pakistan overall even economically. Pakistan’s recent security and political turmoil has undermined its economic edge.

Nevertheless, both my Pakistani heart and academician’s head agree fully that Pakistan’s worst travails are probably behind it and that its future will gradually become better than its past. However, they agree to disagree on the pace of this transformation, with the former expecting and demanding overnight results and the latter robotically producing calculations suggesting a longer timeframe.

Is this article unpatriotic? It clearly challenges cherished conservative national myths. Yet, it is underpinned by the reality that nation-building, the common goal of both, is better facilitated by the truth propagated by liberals rather than the incredulous fairly-tales concocted by conservatives.

The writer is a political and development economist. murtazaniaz@yahoo.com

ہم کہاں ہیں

ایرانی، تُرک یا عرب اپنی ایرانی، تُرک یا عرب تاریخ پر فخر کرتے ہیں۔ جبکہ ہم بجائے تاریخِ پاکستان کے مسلمانوں کی تاریخ پر فخر کرتے ہیں۔ اس پر عربوں کا جواب ہوتا ہے کہ یہ تو ہماری تاریخ ہے تُم کدھر سے آگئے؟ ہم پاکستانی ہونے پر فخر نہیں کرتے ؟ ہمارے پاس پنجابی، سندھی، بلوچ، پختون، سرائیکی، کشمیری، اُردو کلچر تو ہے لیکن پاکستانی کلچر کیا ہے ، یہ بڑا مشکل سوال ہے۔ اس کا جواب شاید آپ کے پاس ہو۔

مسلمانوں میں مفاہمت

جسقدر سعودی عرب ماضی میں پاکستان کی مالی مدد کرتا رہا ہے اس کے پیشِ نظر پاکستان کو اس بات کا اختیار نہیں ہے کہ وہ اسوقت جبکہ سعودی بادشاہت دباؤ میں ہے اس کی مدد نہ کرے۔ اپنے محسن کی مدد کرنا یقیناً ہمارا فرض ہے۔ لیکن اتحادِ بینالمسلمین کی ہمیں سخت ضرورت ہے۔ ترکی اور پاکستان اس وقت اس پوزیشن میں ہیں کہ یہ دونوں طاقتور ممالک اس وقت ملکر سعودی عرب اور ایران کے مابین ایک متحرک اور پُر عزم ثالث کا کردار ادا کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان غلط فہمیوں کو دور کروائیں۔ سعودی عرب کو سب سے بڑا ڈر اپنے آئل کا ہے۔ انکی آئل فیلڈز جنوبی عراق سے جُڑی ہوئ ہیں جہاں کے عوام سعودی بادشاہوں سے خوش نہیں ہیں۔ ان پر سعودی بادشاہوں نے ہمیشہ ظلم ہی کیا ہے۔ تُرک بھی ان بادشاہوں سے نالاں رہے ہیں کیونکہ انہوں نے انگریزوں سے ملکر خلافتِ عثمانیہ کو ختم کروادیا اورخود بادشاہ بن بیٹھے۔ بہرکیف ترکوں نے اس وقت بڑا دل کرکے اتحادِ بینالمسلمین کا بیڑہ اُٹھایا ہے۔ پاکستان مسلمانوں کا سب سے زیادہ طاقتور ملک ہے۔ ترکی اور پاکستان اسوقت ملکر ایران اور سعودی عرب کو گلے ملواسکتے ہیں۔ یہ مسلمانوں پر سب سے بڑا احسان ہوگا ۔ ایرن کو یہ یقین دہانی کروانے کی ضرورت ہے کہ وہ ان بادشاہتوں میں کوئ ماخلت نہیں کریگا ۔ جبکہ سعودی بادشاہوں کو بھی دوسرے مسالک میں مداخلت سے دور رہنے کی ضرورت ہے۔

کھیل،سیاست یا عدم دلچسپی

کرکٹ ورلڈ کپ ہورہا ہے اور کھیل میں ہار بھی ہوتی ہے اور جیت بھی۔ لیکن کھیل میں لڑنا یا نہ لڑنا کھلاڑی اور ٹیم کے ہاتھ میں ہوتا ہے عرب امارات میں کچھ ہی عرصہ قبل پاکستانی ٹیم نے ٹیسٹ میچز میں جس طرح نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا کو شکست سے دوچار کیا تھا ، جس طرح پاکستانی بلّے بازوں نے سنچریوں کا انبار لگایا تھا اُسکے بعد یہ اُمید ہوئ تھی کہ اس مرتبہ پاکستان شاید ولڈ چیمپین بن جائے۔ لیکن ویسٹ انڈیز کے خلاف پاکستانی ٹیم نے جس بے دلی سے کھیلنے کا مظاہرہ کیا ہے اُسکی مثال نہیں ملتی۔ Continue reading کھیل،سیاست یا عدم دلچسپی

فرانس جیسے ممالک سے درآمدات کو بند کردینا چاہئے

دہشتگردی مسائل کا حل نہیں ہے۔ دہشت گردی کی وجہ سے مسلمان بالعموم اور پاکستان بالخصوص دنیا کی نفرت کا نشانہ بن رہے ہیں۔ اگر کوئ بھی ملک مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کرتا ہے تو اُس ملک پر سارے مسلمان ممالک کو او آئ سی کے پلیٹ فارم پر کھڑا ہوکر اُس ملک پر سینکشنز لگادینے چاہئیں۔ سب سے بڑا سینکشن یہ ہوگا کہ مسلمان ممالک ایسے ملکوں سے درآمداد بند کردیں۔ اُنکی اشیا استعمال نہ کریں۔

طالبان کے حمائتی

جب تک مولانا فضل الرحمٰن، جنرل حمید گُل، نواز شہباز شریف، عمران خان، شدت پسند ملا یا جنرل بیگ سے طالبان کے مدر پدر آزاد حمائتی آزاد گھومتے رہیں گے پاکستان میں عوام آرام سے نہیں سوسکتے۔ Continue reading طالبان کے حمائتی

کیا بھارت کا علاج چین پا کستان کنفیڈریشن ہے؟

جب میں بھارت کا رویہ دیکھتا ہوں تو بہت سے سوال ذہن میں اُبھرتے ہیں۔ پھر ایک ہی فارمولا سامنے آتا ہے یعنی جسکی لاٹھی اُسکی بھینس۔ ہمارا سارا پانی بھارت کے رحم و کرم پر ہے- وہ جب چاہے ہمارا پانی روک سکتا ہے اور جب چاہے ہمیں سیلاب کی نظر کرسکتا ہے۔ ایٹم بم نہ وہ استعمال کرسکتا ہے نہ ہم کرسکتے ہیں۔ Continue reading کیا بھارت کا علاج چین پا کستان کنفیڈریشن ہے؟

سالِ نو ۔ عمر خیّام

شمسی سالِ نو سارے احباب کو مبارک ہو۔ شمسی کیلنڈر عمر خیّام کی دین ہے۔ آٹھ سو سال پہلے یہ کیلنڈر معہ Leap Year کے عمر خیّام نے دنیا کو دیا تھا۔ اس کیلنڈر میں اور فطری کیلنڈر میں صرف آدھے سیکنڈ کا فرق ہے۔ اس ہی وجہ سے ہر تین چار سال بعد گھڑیوں کو ڈیڑھ دو سیکنڈ کے لئے adjust کیا جاتا ہے۔

کیا پاکستان ایک ملک ہے

ملالہ یوسف زئ نے ہمارے سر فخر سے بلند کردئے ہیں۔ لیکن بلاول بھٹو جو پاکستان کے مستقبل کے وزیرِاعظم بننے کی راہ پر گامزن ہیں اپنے آپکو صرف اور صرف سندھی گردانتے ہیں۔ انہوں نے نوبل پرائز ملتے ہی ملالہ کو سندھ میں تعلیم کو پروان چڑھانے کیلئے دعوت دی ہے۔ اگر وہ بجائے سندھ کے پاکستان کی بات کرتے تو اس بات میں وزن ہوتا۔ کہاں ایک کرپٹ اور حرام کی روزی پر پلے ہوئے بلاول اور کہاں ملالہ جیسی مقدس ہستی۔ ملالہ ایک پسمامندہ صوبے سے تعلق رکھتی ہے۔ لیکن اس نے کے پی کے کی بات کرنے کے بجائے ساری دنیا کو ایک آنکھ سے دیکھا ہے ۔ دنیا کے سارے مجبور بچوں کو تعلیم دینے کی بات کی ہے۔ Continue reading کیا پاکستان ایک ملک ہے

دودھ کا دودھ پانی کا پانی

جب ذولفقار علی بھٹو کو پھانسی ہوئ تو عام ردِ عمل یہی تھا کہ چار پنجابی ججوں نے تین غیر پنجابی ججوں کی مخالفت کے باوجود بھٹو کو غیر بنجابی ہونے کی وجہ سے پھانسی دیدی۔ اگر وہ پنجابی ہوتا تو یہ نہ ہوتا۔ ویسے بھی چھوٹے صوبوں میں پنجاب کیلئے کوئ خاص محبت نہیں پائ جاتی۔ نہ پنجاب میں چھوٹے صوبوں کیلئے نرم گوشہ پایا جاتا ہے۔ سب خود کو مظلوم اور دوسرے کو ظالم سمجھتے ہیں۔ اگر پاکستان میں تیس چالیس صوبے بنادئے جائیں تو یہ لعنت ختم ہوسکتی ہے۔ پرانے ڈویژنز کو صوبوں کا درجہ دیا جاسکتا ہے۔ ایسا کرنے سے پنجابی بولنے والوں کے سب سے زیادہ صوبے ہونگے اور ان کے سب سے زیادہ سینیٹرز ہوں گے۔ لیکن جب تیس چالیس صوبے ہوں گے تو لسانیت ختم ہوجائے گی اور ہر صوبہ اپنی تعمیرو ترقی پر زور دے گا۔

اب جبکہ عدالت نے شہباز شریف، رعناء ثناء اُللہ اور ڈاکٹر توقیر پر طاہرالقادری کے بتیس کارکنوں کے قتل پر مقدمہ چلانے کا حکم دیدیا ہے تو اب پتہ چل جائے گا کہ پنجابی جج شہباز شریف، رعناء ثناء اُللہ اور ڈاکٹر توقیر کو سزائے موت دلواکر اس پر عمل کرواتے ہیں یا نہیں۔ میں نہیں سمجھتا کہ بھٹو کی طرح انہیں موت کے گھاٹ اُتارا جائے گا۔ اگر انہیں عدالت نے سزائے موت سناد بھی دی تو ان کی سزا نواز شریف کے تابع صدر معاف کردیں گے۔ یہ تو میری اپنی رائے ہے۔ لیکن بھٹو کو تعصب کی وجہ سے پھانسی ہوئ یا نہیں اسکا فیصلہ شہباز شریف، رعناء ثناء اُللہ اور ڈاکٹر توقیر کا کیس کردیگا۔

آخر عوام کیا کرے۔

نواز شریف ایک چاالاک اور کرپٹ بزنس مین ہیں۔ کیونکہ ہم قبائلی سوچ رکھتے ہیں اسلئے پنجاب میں ان کی پارٹی کو ہرانا ناممکن ہے۔ طاہرالقادری کے کارکنوں کا خون شہباز شریف کے سر ہے۔ شہباز شریف ایک اچھے مگر کرپٹ ناظم ہیں۔ نواز اور شہباز شریف کا جھکاؤ دائیں بازو کی جانب ہے۔ عمران خان نے اچھے فلاحی کام کئے ہیں۔ بظاہر وہ ایک ایماندار اور عیش پسند شخصیت ہیں۔ انکی ذاتی زندگی داغدار ہے۔ سیتا وھائٹ سے ناجائز بچی کے باپ ھیں انکا جھکاؤ بھی دائیں جانب اور طالباآن کی جانب ہے۔ پپلز پارٹی کے پاص کرپش کے سوا اور کچھ نہیں۔

ان سب سے لاکھ درجہ بہتر انصار برنی یا کوئ غیر مسلم وزیرِ اعظم ہوسکتا ہے۔

غژل

نہ جل جائے منہ مجھکو لگتا ہے ڈر
جو دل میں ہے لاؤں زباں پر اگر

سکوں سے رہے وہ بناکر کے گھر
مگر میں بھٹکتا رہا عمر بھر

محبت کا رستہ ہے اتنا کٹھن
کہ ہوتا نہیں اختتامِ سفر

جو ہونا تھا وہ ہوگیا جانِ جاں
ہے بیکاراب یہ اگراورمگر

وہ حد سے تجاوز ہی کرتے رہے
مگر میں بھی کرتا رہا درگذر

یہ ظاہر کا مرنا تو مرنا نہیں
نئ زندگی ہے نیا اک سفر

معیارِ صحافت

ڈاکٹر ہود بھائ ایک معروف سائنسداں ہونے کے ساتھ ساتھ ایک دانشور اور مبصر بھی ہیں۔ بالعموم ان کے تبصروں کا ایک نمایاں پہلو یہ ہے کے وہ ثبوت و شواہد پیش کرتے ہوئے منطق کا سہارا لیتے ہیں۔ تقریباً دو ماہ قبل ایک ٹیوی شو میں طالبان کے حامی انصار عباسی صاحب نے ہود بھائ کے ایک سوال پر اینکر سے کہا کہ آپ جب کسی پروگرام میں مجھے بلائیں کسی جاہل کے ساتھ نہ بلائیں۔