خدا سے کلام

خدا سے کلام ۔۔۔۔

اے خدا
میں نے سنا ہے ۔۔
کرہ ارض پر ایک ایسا ملک بھی ہے
جس کی زمین
معصوم لہو سے گل رنگ رہتی ہے
جہاں ہر طرف خاک ہی اڑتی ہے
سنا ہے ۔۔۔
موت جب بھی وہاں کوئی واردات نئی کرتی ہے
بوکھلائی ہوئی رات اکثر دن چڑھے ہی آجاتی ہے
سنا ہے ۔۔
کچھ پرندے
خشک پیڑوں کی شاخوں سے لپٹےمرے پڑے ہیں
کچھ اب بھی پھولوں کے ملبے تلے کراہ رہے ہیں
اے خدا ۔۔!
میدان جنگ کی وسعت جتنی بڑھتی جا رہی ہے
تیری تخلیق کی قیمت اتنی گھٹتی جا رہی ہے
میں نے تو یہ بھی سنا ہے
پر ۔۔۔ کیا ۔۔ یہ سچ ہے
اب ۔۔۔
کوئی حیات تازہ
شام و کشمیر کے دکھوں کو نہیں سمجھے گی
عمر کے اس اختصار پر استغاثہ نہیں کرے گی

ڈاکٹر نگہت نسیم

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *